Ao Tumhe Bataon Mera Tahir Kon Hai

وہ کہہ رہا تھا
میرا طاہر
شہنشاہِ خطابت ہے
لہجے میں زرا دیکھو
اجب سی اک بلاغت ہے
جو اس کا روپ دیکھو تو
ایماں کی حلاوت ہے
جو اس سے بات کرلو تو
دنیا سے بغاوت ہے

وہ مجھ سے کہہ رہا تھاکہ!
ارے تم تو بِکے وے ہو
تمہیں کیامیں سمجھاوں
ُاب کس کام کے تم ہو؟

کہا میں نے بھی پِھر اس سے
کہ سُن
میرا طاہر مجدد ہے
قلندر ہے
خطابت ان کے در کی
اک ادنا سی کرامت ہے
نبیِ پاک کاصدقہ
اِس وقت کی امامت ہے
وہ ایسا بادشاہ ہے جو
درِ زہرا کا نوکر ہے
علی پے جان دیتا ہے
معارف کا سمندر ہے
لرزاں ہیں حاکم بھی
جرات ہے شجاعت ہے
وہ جب بھی بات کرتا ہے
لگے رحمت کا پیکر ہے
اللہ سے میلاتا ہے
دمادم مست قلندر ہے

زمانے یاد رکھیں گے
زمانہ وہ تو آئے گا
ابھی دیکھو جہاں بھی تم
زمانہ اُس کا خوگر ہے

تیرے الفاظ کو چوموں
کہا تو نے بِکائو ہوں

بہت مقبول ہو عاجز
جو وہ کہہ دیں سگِ در ہے

Advertisements

Murgi Nama

مرغی کے ہاتھوں میں ہے اب قوم کی تقدیر

‏ہر انڈہ ہے ملت کے مقدر کا ستارہ

‏⁧‫دیار معیشت میں اپنا مقام پیدا کر
‏نئی مرغیاں نئے انڈے صبح و شام پیدا کر

ایک ہوں مرغیاں انڈوں کی پاسبانی کیلئیے
‏بھائی خلیل کے دڑبے سے لے کر تایا اخلاق کے آستانے تک

ھم لائے ھیں پنجرے سے مرغی نکال کر،،
‏انکے انڈوں کو رکھنا میرے بچو سنبھال کر!!

کھلتا کسی پہ کیوں میری نا اہلی کا معاملہ
‏انڈوں کے انتخاب نے رسوا کیا مجھے

ایک انڈا جسے تُو گراں سمجھتا ہے
‏ہزار قرضوں سے دیتا ہے آدمی کو نجات

(مرغی نامہ)

Ishq o Bharose ki Baazi Haar Gaya – Sarim Noor (Urdu Poetry)

Urdu Poety

  • Kabhi Ayenda Galti Se Bhi Distrub Or Tang Karenge nahi

  • Tmhari Zindagi se Aise Door Chale Jayenge K Loot Kar Wapas ayenge kbi nahi

  • Jhank Kar Jab Dekha Uske Dil Me to Usme Jaga Mere Liye koi Nahi

  • Karon Usko Yaad Shayad Main is Like hi Nahi

  • Karte hyn Khud Se Wada, Abb se Tumhe krenge Tang kabhi Bhi Nahi

  • Sochta Tha Wo Dhoka Mujhe Degi Kabhi Nahi

  • Nadan Tha Main Jo Us Bewafa Ko Kabhi Samjha Hi Nahi

  • Sochta Tha Wo Auruon Ki Jesi Hogi Nahi

  • Ghalt tha Main, Woh Bhi Auroon Se To Juda Bilkul Nahi

  • Ishq o Bharose ki Baazi Haar Gaya Main Sarim

  • Hai Mujhe Qasm Khuda Ki Abb Muhabbat kbi karenge nahi

Az Qalam >> Sarim Noor